Wednesday, 21 August 2013

Ab K Ehsaan Jataney Bhi Nahi Aaya Koi

Posted by Unknown on 03:57 with 1 comment
اب کے احسان جتانے بھی نہیں آیا کوئی
میں جو روٹھا تو منانے بھی نہیں آیا کوئی

ایک وہ دور کہ سونے بھی نہ دیتے تھے مجھے
ایک یہ وقت کہ جگانے بھی نہیں آیا کوئی

ڈگمگاتا تھا تو سو ہاتھ لپکتے تھے مجھے
گر گیا ہوں‌ تو اٹھانے بھی نہیں آیا کوئی

جانے احباب پہ کیا گزری، خدا خیر کرے
عرصے سے نیا زخم لگانے بھی نہیں آیا کوئی

ایسے اُترا ہوں دلوں سے کہ ہنسانا تو کُجا
ایک مدت سے رُلانے بھی نہیں آیا کوئی

کیا سبھی عہد فقط سانس کے چلنے تک تھے؟
قبر پہ دیپ جلا نے بھی نہیں آیا کوئی

یوں تو سو بار جُڑا، ٹوٹا، مگر اب کے امین
ایسے ٹوٹا کہ بنانے بھی نہیں آیا کوئی
 
Ab K Ehsaan Jataney Bhi Nahi Aaya Koi
Mein Jo Rootha Tou Mananey Bhi Nahi Aaya Koi

Ek Wo Dour K Soney Bhi Nahi Detey Thay Mujhe
Ek Ye Waqt K , Jaganey Bhi Nahi Aaya Koi

Dagmagata Tha Tou So Haath Lapaktey Thay
Gir Gaya Hoon Tou Uthaney Bhi Nahi Aaya Koi

Janey Ehbaab Pay Kya Guzri KHUDA Khair Karay
Arsay Se Naya Zakhm Laganey Bhi Nahi Aaya Koi

Aisay Utra Hoon Dilon Se K Hansana Tou Kuja
Aik Muddat Se Rulane Bhi Nahi Aaya Koi

Kia Sabhi Ehad Faqat Saans K Chalne Tak Thay
Qabr Par Deep Jalane Bhi Nahi Aaya Koi

Yun Tou So Baar Jurra Toota, Magar Ab K Mohsin
Aisa Toota K Bananey Bhi Nahi Aaya Koi...!!

1 comment:

  1. Very nice ghazal poetry.
    I am sharing some of my favorite ghazal poetry here.

    Qurbaton mein bhee judai key zamanay mangay
    Dil woh be-mehar ke ronay key bahanay mangay

    Hum na hotay tu kisi aur key charchay hotay
    Khulqat-e-shaher tu kehnay ko fasanay mangay

    Yahi dil tha ke tarasta tha marasim key liay
    Abb yahi tarkey-taaluq key bahanay mangay

    Apna yah haal keh ji haar chukay lut bhi chukay
    Aur mohubaat wohee andaaz puranay mangay

    Dil kisi haal pah qane`h hi nahin jaan-e-FARAZ
    Mil gaay tum bhee tu kaya aur na janay mangay

    ReplyDelete